ایم کیوایم، پشتون تحفظ موومنٹ کے جائز مطالبات کی حمایت کرتی ہے۔ ڈاکٹر ندیم احسان، کنوینر متحدہ قومی موومنٹ

متحدہ قومی موومنٹ کی رابطہ کمیٹی کے کنوینر ڈاکٹرندیم احسان نے کہا ہے کہ ایم کیوایم، پشتون تحفظ موومنٹ کے تمام جائز مطالبات کی حمایت کرتی ہے اور ارباب اختیار سے مطالبہ کرتی ہے کہ پشتون تحفظ موومنٹ کے سربراہ منظورپشتین اور ان کے دیگر رہنماؤں کی جانب سے اٹھائے گئے نکات اور مطالبات پر توجہ دی جائے اور قبائلی علاقوں کے پشتون عوام میں پائی جانے والی بے چینی کو دور کیا جائے ۔ اپنے ایک بیان میں ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا کہ پاکستان کے قبائلی علاقوں کے عوام نے ملک کیلئے بہت قربانیاں دی ہیں،ماضی میں اختیارکی گئی ریاستی پالیسیوں اورفیصلوں سے بھی قبائلی علاقوں کے عوام ہی سب سے زیادہ متاثر ہوئے اور اب حالیہ زمانے میں کئے گئے ریاستی آپریشنوں کا خمیازہ بھی قبائلی علاقوں کے عوام نے ہی بھگتا، انہوں نے ہزاروں کی تعداد میں جانیں دیں، اب بھی ایک محتاط اندازے کے مطابق 30ہزار سے زائد قبائلی لاپتہ ہیں، ڈیڑھ لاکھ سے زائد گھر تباہ ہوگئے اور لاکھوں قبائلی ملک کے مختلف حصوں میں آئی ڈی پیز کی شکل میں مشکل زندگی گزار رہے ہیں۔ ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا کہ نقیب اللہ محسود کے وحشیانہ ماورائے عدالت قتل کے واقعہ کے بعد ان مظالم کے خلاف قبائلی علاقوں سمیت ملک پھر میں پھیلے ہوئے پشتون عوام میں ان مظالم کے خلاف جذبات مزید شدید ہوگئے ہیں ،پشتون تحفظ موومنٹ نے مظلوم پشتون عوام کے جذبات کو زبان دی ہے اسی لئے پشتون تحفظ موومنٹ کو پشتون عوام میں بہت تیزی سے پذیرائی حاصل ہو رہی ہے اور پشتون عوام جوق درجوق اس کے قافلے میں شامل ہو رہے ہیں۔ ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا کہ یہ امر انتہائی افسوسناک ہے کہ پشتون تحفظ موومنٹ کی جانب سے اٹھائے گئے مطالبات پر ہمدردانہ غورکرنے کے بجائے ان کے خلاف منفی پروپیگنڈے کئے جارہے ہیں، ان پر ملک دشمنی اور غداری کے شرمناک الزامات لگائے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ سوچ اور طرز عمل ملک کیلئے کسی بھی طرح مناسب نہیں ہے ۔ ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا کہ ایم کیوایم مظلوم پشتون قبائلی بھائیوں سے مکمل ہمدردی رکھتی ہے اور قائد تحریک الطاف حسین ہر فورم پر قبائلی علاقوں کے عوام کے لئے آواز اٹھا رہے ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیاکہ قبائلی علاقوں کے ماورائے عدالت قتل کئے گئے پشتونوں کے اہل خانہ کو انصاف فراہم کیا جائے،شہداء پیکج کا اعلان کیا جائے، تمام لاپتہ پشتونوں کو بازیاب کرایا جائے ،قبائلی علاقوں میں لوگوں کی نجی املاک، فوج سے خالی کرائی جائیں،آئی ڈی پیز کے طور پر در بدر کئے جانے والے تمام پشتونوں کو ان کے گھروں پر آباد کیا جائے، قبائلی علاقوں میں قائم چیک پوسٹوں پر فوج کے بجائے مقامی لوگوں پر مبنی فورس تعینات کی جائے ،آرمی چیف کے اعلان کے مطابق اندراج کارڈ اور وطن کارڈ  کا خاتمہ کیا جائے اور پشتون تحفظ موومنٹ کے رہنماؤں کے خلاف قائم کئے گئے مقدمات ختم کئے جائیں۔