مہاجروں کے ساتھ دوسرے درجے کے شہریوں جیساسلوک بند کیا جانا چاہیے ۔ڈاکٹر ندیم احسان

ایم کیوایم کی رابطہ کمیٹی کے کنوینر ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا ہے کہ مہاجروں کے ساتھ دوسرے درجے کے شہریوں جیسا سلوک بند کیا جانا چاہیے اور مہاجروں کو ان کے تمام غصب شدہ حقوق دیے جائیں۔ انہوں نے یہ بات لندن کے علاقے ٹوٹنگ میں ایم کیوایم یوکے ساؤتھ لندن کے کارکنوں کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ ڈاکٹرندیم احسان نے کہا کہ مہاجروں کے ساتھ قیام پاکستان کے بعد سے ناانصافیاں کی جارہی ہیں جن کے خلاف کسی نے آواز بلند نہیں کی، ہر دور میں مہاجروں کا قتل عام کیا گیا، مہاجر بستیوں پر حملے کئے گئے لیکن کبھی بھی حملہ آوروں اور مہاجروں کے قاتلوں کو سزا نہیں دی گئی، قائد تحریک الطاف حسین نے ان مظالم اور ناانصافیوں کے خلاف جدوجہد شروع کی تو ان کو ریاستی انتقام کا نشانہ بنایا گیا، مہاجروں نے ایم کیوایم کو بھر پور مینڈیٹ دیا لیکن مہاجروں کے اس مینڈیٹ کو کبھی بھی دل سے تسلیم نہیں کیا گیا اور اسے ریاستی طاقت سے کچلنے کی کوشش کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ 19جون 1992ء کو ایم کیوایم کے خلاف جو فوجی آپریشن کیا گیا وہ حکومتوں کی تبدیلی کے باوجود جاری رہا، 2013ء سے ایم کیوایم کے خلاف جو نیا آپریشن شروع کیا گیا وہ بھی بدستور جاری ہے اور مہاجروں کو دیوارسے لگایا جارہا ہے۔ ڈاکٹر ندیم احسان نے کہا کہ ہمارا عزم ہے کہ ہم تمام ترر یاستی مظالم کے باوجود قائد تحریک الطاف حسین کی قیادت میں جدوجہد جاری رکھیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ انشاء اللہ 7 اکتوبرکو قائد تحریک الطاف حسین کی 65ویں سالگرہ کے سلسلے میں لندن میں جو اجتماع ہوگا وہ ایک بار پھر ہماری تحریک کے دشمنوں کو بتائے گا کہ تمام تر مظالم، سازشوں اور پروپیگنڈوں کے باوجود کارکنان و عوام قائد تحریک الطاف حسین کی قیادت میں متحد ومنظم ہیں ۔ اجلاس سے ایم کیوایم یوکے کے آرگنائزرہاشم اعظم ، سینٹرل آرگنائزنگ کمیٹی کے ارکان ندیم شیخ ، وجیہ احمد اور غفران احمدنے بھی خطاب کیا۔